صحت

لیپیڈیما اور موٹاپا ایک ہی بیماری ؟

لیپیڈیما ایک ایسی نامعلوم بیماری ہے جسے اکثر موٹاپا سمجھ لیا جاتا ہے۔ اس کے شکار افراد، جو زیادہ تر خواتین ہوتی ہیں، کو علاج کے طور پر اپنا طرز زندگی تبدیل کرنے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔لیپیڈیما حقیقت میں چربی کی ایک تقسیم سے پیدا ہونےوالا عارضہ ہے جو اکثر دیر سے تشخیص ہوتا ہے۔ غذا یا ورزش سے اس سے چھٹکارا حاصل نہیں کیا جا سکتا۔ دنیا بھر میں تقریباً 370 ملین خواتین اس عارضے سے متاثر ہیں۔ واضح رہے کہ مردوں میں یہ مرض شاذونادر ملتا ہے۔

ایک ایسی بیماری جس کے لیے خواتین کو عموماﹰ نادرست تشخیص کا سامنا ہوتا ہے

30 سالہ کلاؤڈیا ایفرٹس حاملہ تھیں جب انہیں لیپیڈیما کی بیماری کا سامنا ہوا۔ حمل کے آغاز میں انہیں مختلف ڈاکٹروں کے پاس جانا پڑتا رہا، لیکن کسی بھی نے ان کی حالت کی درست تشخیص نہیں لگا سکی۔ زیادہ تر وقت انہیں وزن کم کرنے، کم کھانے اور ورزش کرنے کا مشورہ دیا جاتا تھا، جس سے ان کی مشکلات میں اضافہ ہوتا گیا۔

کلاؤڈیا نے بتایا، "مجھ میں پیریوسٹیٹس کی تشخیص کی گئی۔ دو تین سال بعد، مجھے یقین ہو گیا کہ کوئی بھی میری مدد نہیں کر سکتا۔”

انہوں نے گفتگو میں اضافی بات کی، "جب آپ کو ہر جگہ یہ بتایا جاتا ہے کہ آپ کے ساتھ کچھ بھی غلط نہیں ہے، سب ٹھیک ہے، تو آخر کار آپ خود ہی اس بات کا یقین کرنے لگتے ہیں۔”

کلاؤڈیا تاہم کبھی بھی مایوس نہیں ہوئیں اور وہ بزنس کنسلٹنٹ اور کوچ کے طور پر کام کرتی رہیں، اپنی ملازمت میں مکمل تن دہی سے مصروف رہیں۔

ان کی بلڈپریشر بہت زیادہ ہوگیا، جس کی وجہ سے دوہزار چودہ میں وہ بےہوش ہو گئیں۔ انہوں نے بتایا، "تب میں صحت کی بحالی کے مرکز پہنچی۔ اُس مرکز میں ‘لمفولوجی ڈپارٹمنٹ‘ بھی ہے، جہاں آخر کار میرے مرض کی درست تشخیص ہوئی۔ مجھے لیپیڈیما کا مرض ہے، جس نے میری ٹانگوں اور بازوؤں میں بہت زیادہ پریشانی پیدا کی۔ ڈاکٹرز نے بتایا کہ یہ لیپیڈیما کا تیسرے اور سب سے بلند مرحلے میں ہے۔” ان دنوں میں کلاؤڈیا کی عمر 53 برس تھی۔

علاج

کلاؤڈیا کو لیپیڈیما کا علاج CPD یا physical decongestive therapy کے ذریعے کیا گیا۔ اس علاج میں باقاعدگی سے لمفاٹک ڈرینیج یا خون کے سفید ذروں پر مشتمل بے رنگ جسمانی رطوبت، جسے خلط ماسی رطوبت بھی کہا جاتا ہے، جسم سے نکالا جاتا ہے۔ اس کے علاوہ، خاص پانی میں ورزشیں کروائی گئیں اور بازوؤں اور ٹانگوں کو باقاعدگی سے کمپریشن دی گئی۔ یہ تھراپی خون کے مائیکرو سرکولیشن کو بہتر بناتی ہے اور جسم کے میٹابولزم کو تیز کرتی ہے۔ اس کے نتیجے میں بافتوں کو، جو اکثر لیپیڈیما کی وجہ سے سخت ہو جاتی ہیں، آرام ملتا ہے اور درد کم ہو جاتا ہے، کم از کم وقتی طور پر۔

لیپیڈیما اور موٹاپے میں فرق ؟ 

ٹوبیاس ہرش، جو جرمنی کی لیپیڈیما سوسائٹی میں بھی فعال ہیں، ایک اسپیشل کلینک سے جڑے ماہر ہیں۔ انہوں نے  بتایا کہ، "ہماری تحقیقات میں، ہم نے دیکھا کہ لیپیڈیما کے مریضوں میں پہلی علامات عموماً بلوغت کے دوران ظاہر ہوتی ہیں۔ اور ان کی تشخیص معمولاً تقریباً 20 سال بعد ہوتی ہے۔”

ڈاکٹر ٹوبیاس ہرش کے مطابق لیپیڈیما میں اس بات پر خاص توجہ دینا ضروری ہے کہ چربی کے جمع ہونے کا موٹاپے سے کوئی تعلق نہیں ہے۔ اس مرض سے متاثر خواتین کے اوپری جسم کے حصے پتلے ہوتے ہیں، جبکہ ٹانگوں اور بازوؤں کے نچلے حصے پر چربی کا جمع ہونا ظاہر ہوتا ہے۔ بیماری کے دوران، اعضاء تیزی سے بڑھتے ہیں یا غلط شکل اختیار کرتے چلے جاتے ہیں۔ بدترین صورت میں، مریض حرکت میں مشکلات کا سامنا کر سکتا ہے اور جسم کی درد میں عامتاً اضافہ ہوتا ہے۔ ان مریضوں کے لیے جنسی سرگرمی کو تقریباً ناممکن بنا دیا جاتا ہے۔ نوعمری افراد کے لیے، ان حالات سے نمٹنا خاص طور پر مشکل ہوتا ہے، کیونکہ انہیں عام طور پر کمپریشن جرابیں پہننی پڑتی ہیں تاکہ تکلیف کو کم کیا جا سکے۔ اس کے علاوہ، مریض کے متاثرہ حصوں پر خراشیں اور نشانات وغیرہ نظر آنے لگتے ہیں۔ ڈاکٹر ٹوبیاس ہرش کے مطابق، "ہارمونز ایک اہم محرک ہیں۔ بیماری کے کلاسیکی محرک بلوغت، گولیوں کا استعمال، حمل اور حیض کا بند ہوجانا ہیں وغیرہ۔” وہ یہ بھی کہتے ہیں کہ اس حوالے سے موروثی عوامل بھی اہم کردار ادا کرتے ہیں، اور اکثر متاثرہ افراد کی ماں یا نانی، دادی بھی اس مرض کے شکار ہوتے ہیں۔

‘لیپو سکشن‘ 

لیپو سیکشن فی الحال اس مرض کا سب سے کامیاب علاج مانا جاتا ہے۔ اس تکنیک میں، جسم کے متاثرہ حصوں میں چھوٹے سے چیرے کے ذریعے ایک خاص محلول کو منتقل کیا جاتا ہے جو بافتوں کو ڈھیلا کر دیتا ہے۔ اس سے چربی کے خلائیے باریک کینولا کے ذریعے باہر نکالے جا سکتے ہیں۔

کلاؤڈیا ایفرٹس نے اپنی ٹانگوں اور کولہوں کے لیے اسی طرح کی چار تھراپی کروائی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ابتدائی درد کے بعد درد میں کمی آئی ہے۔

جرمن لپ لیگ موجودہ میں اس فائدے پر تحقیقات کر رہا ہے جو مریضوں کو ابتدائی سرجری کے بعد حاصل ہوگا۔ ڈاکٹر ہرش کے مطابق، "حتمی ڈیٹا ممکن ہے کہ 2024 کے  اختتام  تک  دستیاب ہوگا، جس سے معلوم ہوگا کہ اس مرض کی تشخیص کے بعد لیپو سیکشن سے مریضوں کو کتنا فائدہ ہوتا ہے۔”

لیپیڈیما کی تشخیص کا سفر خصوصاً پیچیدہ ہے، کیونکہ بہت سے صحت کے ماہرین کے لیے یہ ابھی بھی ایک نامعلوم بیماری ہے۔ اس مشکل سفر میں، ایک اہم قدم ہے کہ مریض اپنے تجربات کو دوسرے مریضوں کے ساتھ شیئر کرے۔

سائنسی برادری کے لیے اس بیماری کے وجوہات کو سمجھنا، اس کی تشخیص کو بہتر بنانا، اور مریضوں کے لیے بہترین علاج کی تلاش کرنا ضروری ہے۔

آپ کا ردعمل کیا ہے؟

متعلقہ اشاعت

Qalam Kahani We would like to show you notifications for the latest news and updates.
Dismiss
Allow Notifications